13

گھر برباد کیوں ہوتے ہیں ؟ ۔۔۔۔۔۔۔تحریر :محمد اسمٰعیل بدایونی

گھر برباد کیوں ہوتے ہیں ؟ ۔۔۔۔۔۔۔تحریر :محمد اسمٰعیل بدایونی
بیٹے کی شادی بہت ارمان سے کی تھی ۔۔۔۔۔۔پھرنہ جانے میرے گھر کو کس کی نظر لگ گئی سب کچھ برباد ہو گیا ۔۔۔۔۔۔۔
میں نے پوچھا :مگر کیسے ؟
زندگی اجیرن ہو گئی ۔۔۔۔۔بس بہو نے طلاق لے لی ۔۔۔۔۔بیٹا گھر خراب ہو نے کی وجہ سے نشے کا عادی ہو گیا ۔۔۔۔شوہر مجھے کہتے ہیں سب کچھ تیری وجہ سے ہوا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔میں کہا ں جاؤں اگر خودکشی حرام نہ ہوتی تو کر لیتی ۔
ایسا کیوں ہوتا ہے ؟۔۔۔۔۔۔۔یہ ہمارے گھروں کا عام مسئلہ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا آپ چاہتے ہیں ہماری زندگی پر سکون ہو جائے ؟۔۔۔۔۔
لوگ ہم سے اور ہم لوگوں سے نہ الجھیں ؟
زندگی بہت آسان ہو جائے گی بس اتنا کیجیے بد گمانی چھوڑ دیجیے۔۔۔۔۔ہمارے اکثر مسائل اس بد گمانی کی کوکھ سے جنم لیتے ہیں اور ندامت کے قدموں میں اختتام پذیر ہو تے ہیں ۔۔۔۔۔
بد گمانی کی پیدائش سے ندامت تک کے سفر میں ہم بلڈ پریشر ، شوگر ، سماجی مسائل ، ذہنی دباؤ اور نفسیاتی امراض میں مبتلا ہوتے چلے جاتے ہیں ۔۔۔۔۔گھر بگڑ جاتے ہیں ۔۔۔۔۔زندگی اجیرن ہو جاتی ہے
یہ بد گمانی آپ کی چادر کی طرح اجلی زندگی پر بس ایک معمولی سے ڈوٹ کی طرح آتا ہے اور آپ کی مکمل زندگی کو میلا کر دیتا ہے ۔۔
معلوم ہے کیسے ؟
صبح بہو جاگی تو اس نے ہمیں سلام نہیں کیا (حالانکہ ہو سکتا ہے بہو کی طبیعت ٹھیک نہ ہو میکے میں کوئی مسئلہ ہو جس نے اس کو الجھا رکھا ہو یا رات کو شوہر سے کوئی ان بن ہو گئی ہو )
ساس کو یہ بات ناگوار گزری اور کہا کیسی لڑکی ہے اس نے مجھے سلام تک نہیں کیا بڑوں کا ادب احترام کیا ہو تا ہے اس کو معلوم نہیں ؟
یہ بدگمانی کا پہلا نقطہ تھا ۔۔۔۔۔یہ بدگمانی کا وہ پہلا ڈوٹ ہے جو آپ کی اجلی زندگی کی چادر پر لگا۔
پھر کہا اس کے ماں باپ نے اس کو تمیز نہیں سکھائی ۔۔۔۔۔
آپ نے بد گمانی کے ڈوٹ کو اور بڑا کر دیا اس کے ماں باپ تک اس دائرے کو پھیلا دیا
اس سے بھی دل نہیں بھرا تو کہا آج کل کی تو ساری لڑکیا ں ہی ایسی ہیں ۔۔۔۔۔۔
آپ نے بد گمانی کے سیاہ داغ کو زندگی کی اجلی چادر پر مکمل پھیلا دیا ۔۔۔۔۔
بہو نے آپ کے روئیے میں کھینچاؤ دیکھا تو وہ محتاط ہو گئی ۔۔۔۔۔ بد گمانی کاڈوٹ مزید گہرا کر دیا ۔۔۔
شام میں بیٹا گھر آیا تو ایک کی چار لگائی ۔۔۔۔۔تھکا ہارا شخص ، باہر معلوم نہیں کیا معاملات تھے بیوی پر راشن پانی کے ساتھ چڑھائی کر دی ۔۔۔۔۔لڑائی جھگڑے کے بعد بیوی میکے چلی گئی ۔۔۔۔۔
ماں کو وقتی اطمینا ن ہوا اب بہو رانی کے دماغ درست ہو جائیں گے ۔۔۔۔۔
وہاں سے اس نے خلع کا مقدمہ کر دیا ۔۔۔۔۔کورٹ کچہری پیسے اور وقت کا ضیاع ۔۔گھر بگڑنے کے سبب آخر میں بیٹا نشے کا عادی ہو گیا اور گھر کا سکون غارت ہو گیا ۔۔۔۔۔
اس کی ابتداء بد گمانی کے ایک چھوٹے سے ڈوٹ سے ہوئی تھی جس نے پوری زندگی کو سیاہ کر دیا ۔۔۔۔۔
اگر اسی وقت ساس صاحبہ بہو سےکہتیں بیٹا طبیعت تو خراب نہیں کچھ پریشان نظر آرہی ہو تو بہو کا احساس ہو جاتا ۔۔۔۔یا کہتیں اچھا چلو آج چائے میں بنا لیتی ہوں تمہارے ساتھ ۔۔۔۔۔آج تم میرے ہاتھ کی چائے پیو تو حالات آج یکسر مختلف ہو تے ۔۔۔۔۔
ان کے بیٹے کا گھر نہیں اجڑتا ۔۔۔۔ان کا بیٹا نشے کا عادی نہیں ہو تا ۔۔۔۔۔ان کا اپنا گھر بھی سکون میں ہو تا ۔۔۔یہ خود کشی کا نہیں سوچتیں ۔۔۔۔۔بس بد گمانی کے منحوس دائرے نے ان کے گھر کے سکون کو غارت کر دیا ۔۔۔
قرآن نے کیا بیان کیا یہ ہی نا !!
يٰٓاَيُّهَا الَّذِيْنَ اٰمَنُوا اجْتَنِبُوْا كَثِيْرًا مِّنَ الظَّنِّ ۡ اِنَّ بَعْضَ الظَّنِّ اِثْمٌ القرآن 12:49
اے ایمان والو بہت گمانوں سے بچو بیشک کوئی گمان گناہ ہوجاتا ہے
اپنی زندگی کو آسان بنائیے ۔۔۔۔۔اسلام بہت خوبصورت دین ہے
زندگی کیسے حسین بنتی ہے اسلام بتاتا ہے ۔۔۔۔
سکون کیسے ملے گا اسلام بتاتا ہے ۔۔۔۔
اسلام کے دامن میں پناہ لیجیے ۔۔۔۔۔آپ کی زندگی آسان ہو تی چلی جائے گی

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں