7

مقناطیسیت کیا ہے؟

مقناطیسیت کیا ہے؟

آپ دو لکڑی کہ پیس ایک دوسرے کہ سامنے رکھیں تو وہ ایک دوسرے کو کشش نہیں کریں گے مگر آپ میگنیٹ کہ سامنے لوہے کا ایک پیس رکھیں تو وہ جادوائی طور پر ایک دوسرے سے جوڑ جائیں گے
میگنیٹک آبجیکٹ ایک دوسرے سے فاصلے پر ہونے کہ باوجود جوڑ جاتے ہیں اس کی وجہ میگنیٹک فیلیڈ ہے جو اس آبجیکٹ کہ اردگرد موجود ہوتی ہے مگر سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ یہ میگنیٹک فیلیڈ آتی کہاں سے ہے؟

ہم یہ جانتے ہیں کہ میگنیٹک فیلیڈ اور الیکٹرکسٹی ایک ہی طرح سے کام کرتے ہیں یا یوں کہا جا سکتا ہے کہ مقناطیسیت اور الیکٹرکسٹی ایک ہی سکے کہ دوپہلو ہیں
کیونکہ کہ جب چارجڈ پارٹیکل حرکت کرتے ہیں تو مگنیٹک فیلیڈ جنریٹ ہوتی ہے مگر ہم جانتے ہیں کہ میگنیٹ میں کوئی کرنٹ گزرے بناء بھی میگنیٹ فیلیڈ موجود ہوتی ہےاور ہم یہ بھی جانتے ہیں کوئی بھی substance ایسی نہیں جو الیکٹرنز، پروٹانز اور نیوٹرنز پر مشتمیل نہ ہو ایسے ہی میگنیٹ بھی ان بنیادی ذرات سے مل کر بنے ہوتے ہیں

مگر میگنیٹزم کو سمجھنے کیلئے کوانٹم لیول پر ذرات کو سمجھنا ہوگا جیسے کہ تمام بنیادی ذرات ماس چارج اور سپن جیسی خصوصیات کہ حامل ہوتے ہیں چارج ہی وہ خصوصیت ہےجو میگنٹزم کا سبب بنتی ہے ہمیں 1922 میں الیکٹران اور پروٹان کی اس خصوصیت کا علم ہوا کہ یہ چھوٹے چھوٹے میگنیٹ ہیں اور ایٹمز الیکٹران پروٹان اور نیوٹران پر مشتمیل ہوتے ہیں الیکٹران کی نسبت پروٹان بہت کم مقناطیسیت کہ حامل ہوتے ہیں پروٹان نیوکلئیس میں موجود ہوتے ہیں اور الیکٹران نیوکلیس کہ اردگرد آور گردی کر رہے ہوتے ہیں الیکٹرانز کی مقناطیسیت کی قوت ذیادہ ہونے کی وجہ سے نیوکلئس کا میگنیٹک فیلیڈ پر خاص اثر نہیں ہوتا الیکٹرانز کہ گھومنے کی وجہ سے آربٹل میگنیٹک فیلیڈ جنریٹ ہوتی ہے اور ہر الیکٹران کا نیوکلئیس کہ گرد اپنا اپنا آربٹ ہوتا ہے اور ایک مکمل شیل جس میں ایٹمز کی تعداد مکمل ہوتی ہے الیکٹران جوڑوں کی شکل میں ہوتے ہیں اور وہ ایک دوسرے کی میگنیٹک فیلیڈ کو کینسل کر دیتے ہیں مگر ایک آدھے شیل میں الیکٹرانز جوڑوں کی شکل میں نہیں ہوتے جس وجہ سے وہ ایک دوسرے میگنیٹک فیلیڈ کینسل نہیں کر پاتے اور اسطرح ایک ایٹم میگنیٹ کی طرح Behave کرتا ہے

اسی خاصیت کو مدنظر رکھ کر جب ہم پیرڈاک ٹیبل کو دیکھتے ہیں تو ہمیں معلوم ہوتا ہے،اس میں سبھی ایلیمنٹ جن کہ الیکٹران کہ آؤٹر موسٹ شیل مکمل یا مکمل ہونے کہ قریب تر ہیں وہ میگنیٹک نہیں ہیں اور جن کہ آؤٹر موسٹ شیل ہاف فل ہیں وہ سبھی میگنٹک خصوصیت کہ حامل ہیں مثال کہ طور پر نکل، کوبالٹ، آئرن، کرومیم ان تمام دھاتوں کہ آؤٹر موسٹ شیل ہاف فل ہے جو انہیے میگنیٹک پراپرٹی فراہم کر رہا ہے مگر صرف آؤٹر موسٹ شیل ہی میگنیٹ بننے کیلئے ضروری نہیں جیسے کرومیم ایک ایسی دھات ہے جس کا ایک ایٹم تو میگنیٹ ہو سکتا ہے مگر بہت سارے ایٹمز ملکر میگنیٹک پراپرٹی کھو دیتے ہیں

یہاں سے بات ایٹمز سے کرسٹلزئزیشن پر آ جاتی ہیں جہاں ایٹمز ملکر ایسے سٹرکچر بناتے ہیں جس میں یا تو ایسا سٹرکچر بنائیں گے جس میں سارے ایک ایٹمز ایک سمت میں aligned ہونگے یا پھر ایک دوسرے کی مخالف سمت میں ہوکر ایک دوسرے کی میگنیٹک فیلیڈ کینسل کر دیں گے ایٹمز وہی صورت اختیار کریں گے جس میں کم انرجی درکار ہوگی! اور کرومیم میں ایٹمزکی کرسٹلز کی ترتیب ایسی ہوتی ہے کہ وہ میگنیٹزم کی خاصیت کھودیتا ہے

اب سوال یہاں یہ پیدا ہوتا ہے کہ میگنیٹ عام طور پر آئرن یا نکل پر مشتمیل ہوتے ہیں عام طور پر لوہے یا نکل کا ایک دوسرے پر کوئی بھی میگنیٹک اثر نہیں ہوتا کیونکہ کہ اُن کی میگنیٹک فیلیڈ ہی موجود نہیں ہوتی تو ایک عام میگنیٹک دھات اور ایک میگنیٹک میں کیا فرق ہوتا ہے؟ حلنکہ کہ دونوں ایک ہی ایلیمنٹ سے بنے ہوئے ہوتے ہیں یہاں بات کرسٹلز سے نکل کر ڈومین پر آ پہنچتی ہے ایک عام لوہے کی بار کہ کچھ ایٹمز ایک سمت میں ہوسکتے اور کچھ ایٹمز ایک سمت میں ایسے میں اس بار کی ڈومینز ایک سمت میں نہ ہونے کی وجہ سے میگنیٹک فیلیڈ وجود میں نہیں آتی مگر جب کوئی سٹرنگ میگنیٹ فیلیڈ اپلائی کی جاتی ہے تو تمام ڈومینز ایک ہی سمت میں ہوجاتی ہیں اور وہ بار عام لوہے سے میگنیٹ میں بدل جاتی ہے..

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں